Tuesday, November 29, 2005

گھبراؤ نہیں ـ 6

خدا سے ملو خدا کو موقع دیا گیا کہ وہ بھی اپنی رائے دے، ہم جنسوں کی شادیاں کیا واقع دنیا میں انقلاب بپا کرسکتے ہیں ـ خدا شرمایا اور لا علمی کا اظہار کرنے لگا جب اس سے مزید پوچھا کہ ہمجنس اگر شادی کرلیں تو کیا برا ہے؟ اس پر خدا اور بھی شرما گیا لیکن جب اس پر سوالات کی بوچھاڑ شروع ہوگئی تو امریکہ آڑے آگیا، کیوں خدا کو شرمندہ کرنے پر تلے ہوئے ہو؟ انسان کی مرضی جو جی میں آئے وہ کرے ـ انسان خدا کی اجازت کے بغیر چاند پر پہنچ گیا، ہوائی جہاز بنالئے، حیرت انگیز کمپیوٹر بھی ایجاد کرلئے، خلاء میں سیٹیلائٹ داغے، دنیا کی تباہی کا سامان نیوکلیئر اور ایٹم بم استعمال کرلیا اور اسکے علاوہ خدا کی رضامندی کے بغیر افغانستان اور عراق پر حملے بھی کردیئے مطلب کہ کئی کام اور مختلف چیزیں خدا کی اجازت کے بغیر انسان نے بہت کچھ کر ڈالا تو اب ہمجنس کی شادی کیلئے خدا کی رائے جاننا کیا معنی رکھتا ہے؟ اب خدا نے بھی دو چار باتیں عرض کرنے کیلئے اجازت چاہی، لوگ منہ اور کان کھولے سماعت کر رہے تھے: ہم نے دنیا میں صرف انسان کو بھیجا اور یہاں آکر تم لوگوں نے اپنے علیحدہ دین بنالئے، اور اس میں بھی کئی فرقے بناکر خود کتابیں لکھیں خود باتیں بنائیں پھر دعوے کے ساتھ اپنے آپ کو دوسروں سے اعلی سمجھ بیٹھے ـ آج تم لوگ ہمجنسوں کی شادی کیلئے میری رائے جاننا چاہتے ہو؟ خدا نے مزید کہا: ابھی امریکہ نے جو باتیں کہیں، میں پوری طرح اس پر متفق ہوں ـ انسان کچھ سے کچھ ہوگیا ہے اور بھی بہت کچھ کرنا چاہتا ہے، تم لوگ چھوٹی اور نابالغ لڑکیوں کے ساتھ عصمت دری کرتے ہو، بیوہ کیساتھ ہمدردی جتاکر اسکی عصمت دری کرنے میں مہارت رکھتے ہو، بھلا ہمجنس کے ساتھ ہمبستری پھر اسکے ساتھ شادی کرنے کیلئے میری رضامندی کی کیا ضرورت؟ واقع آپ حضرتِ انسان اپنی مرضی کے راجا بن چکے ہیں، آپ لوگوں کے خیالات کچھ اِس قسم کے ہوچکے ہیں کہ ہر کوئی اپنے آپ کو خدا سمجھتا ہے، آپ لوگ جو بھی کریں صحیح ہو یا غلط فیصلہ خود ہی کرلیتے ہیں اسلئے میں اپنی رائے دینا خود کی بیوقوفی سمجھتا ہوں ـ میں خدا ہوں، دنیا میں سیاحت کیلئے آیا فی الحال امریکہ کے ہاں مہمان ہوں ـ ـ جاری باقی پھر کبھی
Anonymous Anonymous said...

aRe Shoeb,

tum Banglore ke Hindustani ho aur main Bharat ke ek Qasbe ka. Baat aisi hai keh main ab chand din baad tumhare watan qasbe (Bangalore) men Tapka chahta hoon aur joon hi main apne tayyare se kisi aur jagan jane ke liye utra(abhi wahan kaam ki khatir 2-4 saal rahoonga) to jo socha tha wahi paya. auto riksha wala hawai adde se railway adde ka 200 nagta tha. ek auto wala jo not-so-Banglorean raha hoga usne meter chalakar jab city nami station par pahonchaya to sirf 62.50 ka bil tha. yeh bat isliey likh raha hoon keh tum dilbardashta mat hona- tum us pahle rikshe wale ki tarah ho jo koi usool naheen paalta. aur mediocracy dekho keh kisi achchhi bandish/zabteh se bachne ke liye tum khud ko ghair mazhabi batate ho. kya hi achchha ho keh tum khud ko la-islami elaan kardo aur naam bhi badalna naheen paRega. isi baat ka izhar tum urdu ke liye anjane men karte ho. na angrezi ke ghat par ho na hi urdu ke ghar par. agar tum insaan aur sirf insaan ho to mere is tabsereh par abhi jald hi radde amal karo. insaniyat ka doosra naam hi Islam hai. main darhi naheen rakhta na hi is sunnat ko sub faraez se pahle karne ka iradah hai lekin.....

mere ek sathi ne kaha keh sahab Dehli-Bangalore ki tarah yahan thori soch sakte hain.... uska matlab sahooliyat se tha to maine kaha keh hum to Bambai-Kalkatta ki bat karte hain yeh bat samajh mein naheen aaee to une poochha main samjha naheen maine kaha keh tum agar bare shahron ki baat karte ho to main Bambai aur Kalkatte mein rah chuka hoon phir tum ungli soojh kar Dehli/Banglore ka pahar kyun banate ho, woh chup ho gaya, kya Shoeb bhi,

tumhara ek Bharati ......

November 30, 2005 1:00 PM  
Anonymous Anonymous said...

aqdad

November 30, 2005 1:08 PM  
Anonymous sara said...

me germany see hou or pakistani hou . or musilm hou hindu app pot ko kiyio mante hai je kiya hai ?????????

May 16, 2006 12:45 PM  

Post a Comment